5

حکومتی وفد کی ناراض ایم کیو ایم کو منانے کے لئے ایک ہفتے میں دوسری ملاقات

کراچی: جہانگیر ترین کی سربراہی میں حکومتی وفد نے اپنی اتحادی جماعت ایم کیو ایم کو منانے کے لیے ایک ہفتے میں دوسری مرتبہ ملاقات کی ہے۔ جہانگیر ترین کی سربراہی میں ایم کیو ایم کے عارضی مرکز آنے والے حکومتی وفد اسد عمر، پرویز خٹک، حلیم عادل شیخ، فردوس شمیم نقوی اور خرم شیر زمان شامل ہیں۔ ایم کیوایم کے کنوینر ڈاکٹر خالد مقبول صدیقی کی قیادت میں عامر خان ، کنور نوید جمیل ، فیصل سبزواری، امین الحق اور خواجہ اظہار حکومتی وفد سے مذاکرات کررہے ہیں۔دوران گفتگو جہانگیر ترین نے خالد مقبول صدیقی کو کابینہ میں شمولیت کی دعوت دی جس پر خالد مقبول صدیقی نے کہا کہ کابینہ میں شامل ہونا اتنا بڑا مسئلہ نہیں ہمارے مسائل اہم ہیں ، عوام کا ہم پر بہت  دباؤ ہے۔ ہم نے حکومت کا ہر سطع پر ساتھ دیا ہے حکومت کو بھی چاہیے کہ ہم سے کئے گئے وعدے پورے کئے جائیں۔جہانگیر ترین نے کہا کہ ایم کیوایم کے مسائل اہم ہیں لیکن چیزیں ٹھیک ہونے میں وقت لگے گا ، ہم چاہتے ہیں کہ آپ ہمارے ساتھ رہ کر ملک اور کراچی کی خدمت کریں جس پر خالد مقبول صدیقی نے کہا کہ  ملک کی خدمت ہمیشہ کی ہے اور کریں گے اس کے لیے ہمیں کسی وزارت کی ضرورت نہیں ، ہمارے لیے عوام کے مسائل بھی اہم ہیں اور ایم کیوایم کے دفاتر بھی کھلنے چاہییں۔ایم کیو ایم کے عارضی مرکز بہادر آباد میں جہانگیر ترین کی سربراہی میں حکومتی وفد کی تواضع حلیم سے کی گئی۔ایم کیو ایم کے عارضی مرکز جانے سے قبل جہانگیر ترین نے گورنر ہاوَس کراچی میں پی ٹی آئی اراکین سندھ اسمبلی سے ملاقات کی۔ اس موقع پر پی ٹی آئی ارکان نے ایم کیو ایم کے مطالبات اور دیگر صوبائی امور کے حوالے سے اپنا موقف پیش کیا۔واضح رہے کہ 12 جنوری کو اسد عمر کی سربراہی میں حکومتی وفد بہادر آّباد آیا تھا تاہم وہ ایم کیو ایم کو منانے میں کامیاب نہیں ہوسکے تھے

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں